433

منتخب ایوان داتقدس کتھے گیا؟

لکھاری ،زاہد حسین

پارلیمنٹ وچ اپوزیشن داشور مچانا کوئی انوکھی گل نہیں، لیکن اجلاس دی کارروائی دوران حکومتی بینچاں نوں رولا پاکے کارروائی نوں ڈکدے ویکھ دیاں اچنبا ہویا۔بجٹ اجلاس نوں چالو ہوئیاں اک ہفتہ ہوون نوں آرہیا اے، روز دیہاڑ رولا رپا تے ہنگامے دی اجیہی مثالاں بوہت گھٹ ہی ویکھن نوں ملیاں نیں، جنہاں وچ ملک دے سبھ توں وڈے چونویں ایوان دا مذاق اڑایا گیاہووے۔
نیب دی حراست وچ سیاسی آگوواں دے پروڈکشن آرڈرز جاری نہ ہون اتے اپوزیشن جیویں احتجاج کررہی اے، تے جیویں سپیکر لچک وکھان توں انکاری اے۔ایس نوں ویکھ دیاں کسے چنگے سلوک دی چھیتی آس نئیں کیتی جاسکدی۔سرکار بدوبدی مالی بل منظور کروان وچ کامیاب ہوسکدی اے ،پر ایس توں اصل جھگڑا ختم نئیں ہووے گا۔
سانجھے اپوزیشن پارلیمنٹ اندر تے باہر اپنے پتے وکھادتے نیں، وزیراعظم وی لڑائی دے موڈ وچ وکھائی دیندے نیں۔اوہناں لہجہ اوکھا وکھائی دے رہا اے۔ صورتحال نوں ٹھنڈا کرن دی تھاں عمران خان اپنے قانون بناون والیاں توں چاہندے نیں پئی اوہ اوکھے ای رہن تے اسمبلی وچ اپوزیشن دی تقریران دوران اڑیکاپائی رکھن۔
ممبراں دا اک دوجے نوں چُبھدی تنقید دا نشانہ بنانا تے ‘چور’،’ڈاکو’دیاں آوازاں لانا بڑی شرم والی گل اے۔ بوہت گھٹ پارلیمنٹ دے ممبراں نال انج کیتا گیا۔ ممبربینر لاکے فیر کجھ چرمگروں رولا پاون لئی کھلوجاندے نیں۔ ایس نال چونویں ایوان وچ عوامی اعتماد نوں چوکھانقصان اپڑیا۔لنگھے دس مہینیاں دوران قانون بناون دے کم اک پاسے، کسے اہم پالیسی معاملے اتے وی بڑی مشکل نال بحث ہوپائی ۔
کوئی شک نہیں ایس دی ذمہ داری دوناں حزب اختلاف تے حکومتی بینچاں اتے عائد ہوندی اے۔ ایہدی ذمہ داری سرکار اتے اوندی اے۔
بجٹ تقریر دوران نعرے بازی کردے حزب اختلاف دے سیاستداناں ولوں وزیر مملکت حماد اظہر دی تقرر وچ اریکا پاون دی کوشش ،ایس دوران پی ٹی آئی ممبران نال ہتھی پینا شرم والی حرکت اے۔
حکمراں جماعت ولوں نیب دی حراست وچ پارلیمنٹ ممبراں دے پروڈکشن آرڈراں دی مخالفت غیر معقول کارروائی اے۔ ایہہ ماضی دے طریقے توں وکھ اے،سپیکر جس نوں نرپکھ ہونا چاہیدا اے، اوہناں دا موقف وی متنازع رہیا اے۔ ممبراں نوں پارلیمنٹ اجلاس وچ شرکت دی اجازت نہ دین دے فیصلے پچھے منطق ساڈی سمجھ توں باہر اے۔ عمران خان نال مسئلہ ایہہ وے کہا وہ سمجھ دے نیں پارلیمنٹ وچ اوہناں دی پارٹی دے ممبراں توں ہٹ کے باقی سبھ کرپٹ نیں تے اوہناں نوں ایتھے نئیں ہونا چاہیئے۔
آپ نوں سبھ توں ودھ چنگا تے اخلاق والا سمجھنا ایہو احساس تے ضدی سوچ اگے چل سیاسی کھچ دی ذمہ دار ہووے گی۔
جیہدے پاروں منتخب جمہوری ادارے وی ماڑے پے جاون گے۔

حزب اختلاف کے رہنماؤں کی پیچھے پڑی نیب پر بے اطمنانی کے بعد اب عمران خان قرضوں کے مسئلے پر کمیشن بنانا چاہتے ہیں کیونکہ ان کے مطابق گزشتہ حکومتوں نے ‘قرض کی مد میں ملنے والی رقم کا غلط استعمال کیا’۔ بلاشبہ ملک کے بدترین مالی بحران میں گزشتہ برسوں کے دوران بڑھتے بھاری قرضوں کا بھی ہاتھ ہے۔ مگر اس بحران کا زیادہ تعلق یکے بعد دیگرے آنے والی حکومتوں کی خراب اقتصادی اور مالی پالیسیوں سے ہے، اور ضروری نہیں کہ یہ کرپشن سے ہی جڑا ہو۔ اقتصادی اور مالی ماہرین بلکہ عمران کے تجویز کردہ فوجی اور سویلین انٹیلجنس اداروں کو قرض معاملے کی جانچ کرنی ہوگی۔ اس کا مقصد اس مسئلے کے حل کی تلاش ہونا چاہیے نہ کہ اسے سیاسی مخالفین کے خلاف استعمال کیا جائے۔
عمران خان معاملات کو بہت ہی محدود تناظر میں دیکھنے کا رجحان رکھتے ہیں۔ وہ پیچیدہ مسائل سے نمٹنے کے لیے سہل پسندانہ طریقہ کار کا انتخاب کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ وہ اقتدار میں آنے کے بعد سے ایک کے بعد ایک غلطی کرتے آئے ہیں۔ تاہم سب سے خطرناک ان کی حکومت کا انٹیلجنس اور سیکیورٹی اداروں پر بڑھتا انحصار اور ان اداروں کو ان شعبوں میں شامل کرنے کا عمل ہے جن کا وہ نہ تو مینڈیٹ رکھتے ہیں اور نہ ہی مہارت۔
گزشتہ ہفتے آدھی رات کو ٹی وی پر خطاب ایک قومی مذاق سے کم نہیں تھا۔ بجٹ کے اعلان کے چند گھنٹوں بعد حزب اختلاف کو دھمکانے کے پیچھے منطق سمجھ سے باہر ہے۔ توقع تو یہ تھی کہ وزیراعظم عوام کو وضاحت دیتے کہ سخت مالی اقدامات آخر کیوں درکار تھے اور وہ رائے عامہ کو اصلاحاتی پروگرام کے حق میں لانے کی کوشش کرتے۔
مگر ان کی طویل اور بے ربط گفتگو کا محور گزشتہ حکومتوں کے ‘بُرے اعمال’ رہے۔ انہوں نے کہا کہ معیشت مستحکم ہوجانے کے بعد اب وہ انسداد کرپشن کی مہم میں تیزی لانے پر توجہ مرکوزکریں گے۔ تاہم معیشت کے مستحکم ہونے کا دعوی کرنا قبل از وقت ہے، اس بحران کے خاتمے کے لیے ابھی ایک طویل وقت لگے لگا۔
یہ سچ ہے کہ ورثے میں ملنے والے مالی بے ترتیبی کو ٹھیک کرنا پی ٹی آئی حکومت کے لیے ایک انتہائی مشکل چیلنج ہے اور اس کام کے لیے ٹھوس اورغیر مقبول اصلاحاتی اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے۔ مگر عمران خان کی مخالفین سے جارحانہ انداز میں پیش آنے کی سوچ نے حکومت کے لیے یہ کام مشکل ترین بنا دیا ہے۔
بجٹ میں متعارف کیے جانے والے ان مشکل مگر ضروری اقدامات کے لیے حکومت کو سیاسی درجہ حرارت زیادہ کرنے کے بجائے کم کرنے کی ضرورت ہے۔ بے شک معیشت میں بحالی کے چند آثار شاید دکھائی رہے ہوں مگرمسلسل سیاسی عدم استحکام سے بحالی کا عمل یہ متاثر ہوسکتا ہے۔
حکومت پارلیمنٹ کو معاملات سے لاتعلق بناتے ہوئے غیر منتخب اداروں پر انحصارکرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ ٹیکنوکریٹس کو چند شعبوں میں ماہرانہ رائے کے لیے تو استعمال کیا جاسکتا ہے لیکن انہیں فیصلہ سازی پر غالب نہ ہونے دیا جائے اور نہ انہیں حکومت چلانے کی اجازت ہونی چاہیے۔
چند غیر مصدقہ رپورٹس کے مطابق حکومت ‘ایکنامک سیکیورٹی کونسل’ کو قائم کرنے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے کہ جس میں اعلیٰ سیکیورٹی قیادت شامل ہوگی۔ اس قسم کے اقدام سے سویلین خودمختاری کمزور ہوسکتی ہے اور فوجی کردار کو باضابطہ طور پر وسعت مل سکتی ہے، جبکہ فوج کا سایہ پہلے ہی پی ٹی آئی حکومت کی میں گہرا ہوا ہے۔
ملک کے سب سے بڑے انٹیلجنس ادارے کی قیادت میں حالیہ تبدیلی نے بھی کئی لوگوں کو حیران کردیا ہے۔ حزب اختلاف میں ابھرتے اتحاد کے پیش نظر یہ اقدام کافی زیادہ اہمیت کا حامل بن چکا ہے۔ تشویش کا اظہار ممکن ہے کہ حد سے زیادہ کیا گیا ہو لیکن یہاں تاثر کی کافی اہمیت ہے۔
اقتصادی اور سیاسی استحکام ایک دوسرے سے لازم ملزوم ہے۔ اقتصادی بحالی کے لیے سویلین جمہوری عمل کی مضبوطی اولین شرط ہے۔ پارلیمنٹ کے اندر اور باہر تناؤ میں کمی لانا ہی حکومت کے مفاد میں زیادہ بہتر ہے۔ جارحانہ طریقہ کار حکومت کو مزید نقصان پہنچائے گا۔ پارلیمنٹ کے تقدس اور اس کے نمائندہ ادارے کے طور پر کردار کی بحالی بہت ضروری ہے۔
شکریہ روزانہ ڈان

اپنی رائے دا اظہار کرو